جن، بھوت اور فقیر سائیں

سیالکوٹ کے ایک گائوں سے تعلق رکھنے والے فقیر سائیں، اپنی شاعری میں توہم پرستی سے چھٹکارا پانے اور غوروفکر کرنے کی دعوت دیتے ہیں۔ انسانی مساوات، مسلمان معاشروں کی زبوں حالی اور خود احتسابی ان کی شاعری کے موضوعات ہیں۔

2 COMMENTS

  1. Wah, Ghri aur pr asr shaery!

    Bat chli kale jadoo ki, kya khne, jado to jado hi hota he na. kala ho ya science ka, itna frq zaroor he ke bnd dimagh kale jado pr aur khule, roshan dimag science ke jado pr yaqeen rkhte hen. Mere khyal men to aik sciencedan se bra jadoger koi ho hi nahi skta. Kaynat ke israr-o-rmoz se prda uthana aur phir aisi ijadat krna ke jin se aql dng rh jae, ye sb kya he.

    Rehi bat rngeeni ki to ye to shaeron aur adeebon ki nazuk khyali ki mrhon-e-minat he. Rngeeni roman se peda hot he. Shetan to bs gndgi hi phelata he aur isi liye iski amjgah yehi bnd dimagh hote hen.

  2. “احمد ندیم قاسمی کی ایک بہت عمدہ نظم۔۔ ‘ایک درخواست’ کے نام سے”

    Is video ne mujhe ye nazam yad dila di.

Leave a Reply